پاکستان آنے والوں کیلئے 48 گھنٹے پہلے ٹیسٹ کی شرط عائد

اسلام آباد(ویب ڈیسک) بیرون ملک سے پاکستان آنے والوں کیلئے 48 گھنٹے پہلے ٹیسٹ کی شرط عائد کر دی گئی ہے، پاکستان آنے والے مسافروں کے لیے نیا حکم نامہ جاری کر دیا گیا ہے۔

سول ایوی ایشن کے نئے حکم نامے میں کہا گیا ہے کہ سفری پابندیوں والے ممالک کی کیٹیگری بی اور سی فہرست کو ختم کیا جا رہاہے۔ پاکستان آنے والوں کے لیے 48 گھنٹے پہلے کا پی سی آر ٹیسٹ لازمی قرار دیا گیا ہے۔

حکمنامہ کے مطابق سی اے اے نے ممانعت والے ملکوں کی کیٹیگری بی اور کیٹیگری سی فہرست کو ختم کرنے کا فیصلہ کیا ہے۔جس پر 5 جنوری سےعمل درآمد ہوگا۔

نئے حکم نامے کے مطابق یورپی ملکوں سے پاکستان پہنچنے والے مسافروں کے لئے ریپڈ انٹیجن ٹیسٹ لازمی قرار دیا گیا ہے۔ یورپی ملکوں سے پاکستان آنے والے مسافروں کے لئے ریپڈ انٹیجن ٹیسٹ بھی لازمی قرار دیا گیا ہے۔

بتایا گیا ہے کہ کورونا ٹیسٹ مثبت آنے پر مسافروں کو 10 روز کے لیے قرنطینہ سینٹرز میں رکھا جائے گا،ہوٹل یا کسی مخصوص جگہ پر قرنطینہ کے اخراجات مسافر کو خود برداشت کرنے ہوں گے۔

سول ایوی ایشن کے نئے حکم نامے کا اطلاق 5 جنوری سے ہو گا،تاہم مسافروں پر ویکسینیشن کی پابندی سے متعلق کوئی نیا حکم جاری نہیں کیا گیا۔

14 دسمبر کو سول ایوی ایشن اتھارٹی کی جانب سے بیرونِ ملک سے آنے والے مسافروں کے لیے کورونا ویکسی نیشن کی مکمل ڈوز کے بغیر پاکستان سفر کی سہولت کے اجازت نامے میں 2 ماہ کی توسیع کی گئی تھی۔

دنیا بھر میں کورونا وائرس کے نئے ویرئینٹ اومی کرون کے پھیلاؤ میں مسلسل اضافہ ہو رہا ہے جس کے پیش نظر مختلف ممالک نے مختلف نوعیت کی سفری پابندیاں بھی عائد کررکھی ہیں.

دنیا کے کئی ممالک میں اومی کرون کے پھیلاؤ میں تیزی آنے کی وجہ سے کئی ممالک میں لاک ڈاؤن کا عندیہ بھی دیا جا رہا ہے تاہم اس حوالے سے کوئی حتمی فیصلہ نہیں کیا گیا.

0Shares

Comments are closed.