پارلیمنٹ لاجز میں پولیس کا آپریشن ، انصارالا سلام کے متعدد رضا کار گرفتار

پارلیمنٹ لاجز میں ڈنڈا بردار جتھے لانے کی اجازت نہیں دے سکتے، وزیر داخلہ

اسلام آباد( زمینی حقائق ڈاٹ کام)پارلیمنٹ لاجز میں پولیس کا آپریشن ، انصارالا سلام کے متعدد رضا کار گرفتار کرلئے گئے، وزیر داخلہ کہتے ہیں ، پارلیمنٹ لاجز میں ڈنڈا بردار جتھے لانے کی اجازت نہیں دے سکتے یہ بدمعاشی ہے۔

پولیس نے پارلیمنٹ لاجز میں جمعیت علماء اسلام کی ذیلی تنظیم انصارالاسلام کے خلاف کے خلاف کارروائی کی، نجی ٹی وی آر وائی نیوز کے مطابق رضاکار لاجز کے اندر گشت کرنے کے ساتھ ساتھ ریہرسل کرتے نظر آئے ۔

انصارالاسلام کے درجنوں رضاکار احاطے اور لاجز میں گشت کرنے کے ساتھ ساتھ ریہرسل کرتے نظر آنے پر پارلیمنٹ لاجز میں اس وقت غیرمعمولی صورتحال پیدا ہوئی۔

وفاقی وزیر داخلہ اور انتظامیہ حرکت میں آئی، ڈی آئی جی کی ہدایت پر پولیس کی بھاری نفری نے آپریشن کر کے پارلیمنٹ لاجز میں موجود انصارالاسلام کو باہر نکال دیا۔

خاکی لباس میں ملبوس انصاالا سلام کے رضاکاروں کے خلاف کارروائی کے دوران کارکنوں اور پولیس کے مابین ہاتھاپائی ہوئی جس سے صورتحال مزید کشیدہ ہو گئی۔

اس دوران پولیس نے سینیٹر کامران مرتضیٰ کو بھی ان کی ڈھال بننے پر حراست میں لیا تاہم بعد میں چھوڑ دیاگیا، مولانا فضل الرحمان نے میڈیاسے گفتگو میں انصارلا سلام سے متعلق سوال پر جواب دیا کہ میں پولیس سے خود کو غیر محفوظ سمجھتاہوں۔

وزیر داخلہ شیخ رشید نے نجی وی سے گفتگو کرتے ہوئے کہا پارلیمنٹ لاجز میں کسی کو ڈنڈا بردار جتھے لانیکی اجازت نہیں ایسا کرنا بدمعاشی ہے۔
وزیرداخلہ نے کہا کہ پارلیمنٹ لاجز میں جن کی ڈیوٹی تھی ان کیخلاف بھی کارروائی ہوگی۔

انھوں نے کہ نجی انصارلا سلام والے پارلیمنٹ لاجز کیسے داخل ہوئے، جن کی ڈیوٹی تھی اور انھوں نے ان کو روکا نہیں ہے ان کے خلاف بھی ایکشن لوں گا، پارلیمنٹ لاجزمیں ایسے ڈنڈا بردار جتھے برداشت نہیں کیے جائیں گے۔

شیخ رشید نے کہا کہ 2 ایم این ایز کی آڑ میں ڈنڈا بردار جھتہ پارلیمنٹ لاجز میں گھس گیا پولیس فورس پہنچ گئی ہے ڈنڈا بردار جتھہ برداشت نہیں کیا جائے گا اپوزیشن کونظرآگیا ہے عدم اعتمادکی تحریک ناکام ہو گی ۔

0Shares

Comments are closed.