افغان صدارتی محل کے قریب نماز عیدکے دوران راکٹ حملے

فوٹو: سکرین گریب

کابل ( ویب ڈیسک) نماز عید کے دورن افغان صدارتی محل کے قریب راکٹ حملے کیے گئے ، فضاء دھماکوں سے گونج اٹھی خوفزدہ ہو کر بعض نمازی جماعت سے نکل کر بھاگنے لگے۔

غیر ملکی خبر ایجنسی کے مطابق افغانستان کے صدارتی محل کے قریب اس وقت راکٹ حملے ہوئے جب عید الاضحیٰ کی نماز ادا کی جا رہی تھی کہ اچانک فضاء خوفناک دھماکوں سے گونج اٹھی۔

راکت حملوں کے دوران افغانستان کے صدر اشرف غنی، وزراء مشیر اور دیگر اعلٰی حکام عید کی نماز پڑھ رہے تھے اس دوران یکے بعد دیگر دھماکے ہوئے اکثریت نمازی دھماکوں کے باوجود پرسکون انداز میں نماز پڑھتے رہے۔

بین الاقوامی میڈیا کے مطابق نماز عید کے دوران فائر کئے گئے تین راکٹ صدارتی محل کے قریب گرے تاہم کوئی جانی نقصان نہیں ہواہے جس کے بعد صدارتی محل کی سکیورٹی مزید سخت کردی گئی۔

افغان وزارت داخلہ نے بتایا کہ حملے کے وقت محل میں نمازعید ادا کی جارہی تھی، راکٹ حملے عید الاضحٰی کی نماز کے دوران ہوئے،راکٹ حملوں کی آواز سے کئی نمازی ڈر گئے۔

جس کے بعد علاقہ کو سکیورٹی اہلکاروں نے گھیرے میں لے لیا۔ نماز عید کے بعد افغان صدر اشرف غنی نے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ افغان عوام کا اتحاد ہی ان کی طاقت ہے۔

واضح رہے افغان طالبان اور امریکہ کے مزاکرات کی بھی اشرف غنی مخالفت کرتے رہے ہیں جب کہ وہ طالبان کے خلاف طاقت کے استعمال کے حامی تھے تاہم امریکہ کے انخلاء اور طالبان کے متوقع غلبہ کے بعد وہ اتحاد کے حامیوں میں شامل ہو گئے ہیں۔

0Shares

Comments are closed.