طالبان سربراہ لڑکیوں کی تعلیم پر پراپیگنڈا کا موقع نہ دیں، مفتی تقی عثمانی

کراچی(زمینی حقائق ڈاٹ کام)طالبان سربراہ لڑکیوں کی تعلیم پر پراپیگنڈا کا موقع نہ دیں، مفتی تقی عثمانی نے افغانستان میں لڑکیوں کے اسکول دوبارہ کھولنے سے متعلق طالبان کے سربراہ ملا ہیبت اللہ کوخط ارسال کردیا۔

پاکستان کے بڑے عالم دین و مذہبی اسکالر مفتی تقی عثمانی کی جانب سے طالبان کے سربراہ ملا ہیبت اللہ اخوند زادہ کوبھیجے گئے خط میں کہا گیا ہے کہ افغانستان میں لڑکیوں کی تعلیم کا مسئلہ دشمن کے پروپیگنڈے کا ذریعہ بن رہا ہے۔

مفتی تقی عثمانی کی طرف سے بتایا گیا ہے کہ ہماری رائے کے مطابق شرعی حدود میں رہتے ہوئے لڑکیوں کی تعلیم کا انتظام کرنا ضروری ہے، تعلیم یافتہ خواتین ملک اورمعاشرے کے لئے اہم ہیں۔

مفتی تقی عثمانی نے خط میں کہا کہ یہ تاثر ختم کرنے کی ضرورت ہے کہ اسلام یا امارات اسلامیہ لڑکیوں کی تعلیم کے خلاف ہیں لہٰذا لڑکوں سے علیحدہ لڑکیوں کی تعلیم کا بندوبست کرنا ضروری ہے۔

خط میں پاکستان کے سب سے بڑے مذہبی اسکالر و عالم دین مفتی تقی عثمانی نے مزید کہا کہ سنا ہے افغانستان میں لڑکے اورلڑکیوں کے لئے الگ تعلیم کے لئے جگہ کی کمی ہے.

طالبان سربراہ کو مشورہ دیا ہے کہ اس کا حل ایک ہی عمارت میں ایک وقت میں لڑکیوں اوردوسرے وقت میں لڑکوں کی تعلیم کا بندوبست کرکے نکالا جاسکتا ہے۔

خط میں مزید کہا گیا ہے کہ امارات اسلامیہ کے فراخدلانہ اور حکیمانہ اقدامات کی قدر کرتے ہیں، اسلامی سوچ اور اخلاص کو بھی سراہا گیا ہے.

0Shares

Comments are closed.