پی ٹی آئی خاتون رکن اسمبلی پر فائرنگ کرنے والا شوہر گرفتار، عدالت پیش

اسلام آباد( زمینی حقائق ڈاٹ کام )پی ٹی آئی خاتون رکن اسمبلی پر فائرنگ کرنے والا شوہر گرفتار، عدالت پیش کیا گیا ، عدالت نے ملزم کو 14 روزہ جوڈیشل ریمانڈ پر بھیج دیا۔

تحریک انصاف کی رکن اسمبلی پر فائرنگ کا واقعہ گزشتہ روز پیش آیا تھا جس کا مقدمہ ان کے شو ہر کے خلاف درج کیا گیا تھا پارلیمنٹ لاجز میں گزشتہ روز فائرنگ کی گئی تھی جس میں رکن قومی اسمبلی جویریہ ظفر محفوظ رہیں۔

تحریک انصاف کی خاتون رکن قومی اسمبلی جویریہ ظفر جو کہ پارلیمانی سیکریٹری برائے اوورسیز پاکستانیز بھی ہیں کی طرف سے جویریہ ظفر پر فائرنگ کا مقدمہ ویمن پولیس اسٹیشن اسلام آباد میں اپنے شوہر خلاف درج کرایا گیاہے۔

مقدمہ میں اقدام قتل کی دفعہ 324 (اقدام قتل) شامل ہے،ایف آئی آر کے مطابق جویریہ ظفر کا موقف ہے کہ 6 ماہ قبل ان کا نکاح حیدر علی بلوچ سے ہوا تھا، ان کے شوہر نے معمولی جھگڑے پر بندوق تانی، جس پر انہوں نے عدالت جاکر خلع لینے کے لیے کہا۔

مدعی مقدمہ کا کہنا تھا کہ میرے شوہر نے مجھے اور میرے گھر والوں کو جان سے مارنے کی دھمکیاں دیں، جبکہ مجھ پر گولی بھی چلائی اور
ملزم کی بندوق سے چلائی گئی گولی انہیں نہیں لگی بلکہ دیوار پر لگی اور انہوں نے بھاگ کر جان بچائی۔

پی ٹی آئی کی ایم این اے نے پولیس سے مطالبہ کیا ہے کہ ان کے شوہر سے خلاف جلد از جلد کارروائی کی جائے،انہوں نے یہ بھی کہا کہ اگر انہیں یا ان کے اہل خانہ کو کوئی جانی یا مالی نقصان ہوتا ہے تو اس کا ذمہ دار مقدمے میں نامزد ملزم حیدر علی بلوچ ہوگا۔

خاتون رکن اسمبلی کے مطابق ان کا حیدر بلوچ سے میرا چھ ماہ پہلے نکاح ہوا۔ میرے اور شوہر کے درمیان معمولی بات پر لڑائی ہوگئی اور میں نے کہا کہ میں عدالت جا کر خلع لے لوں گی۔

پولیس نے زیر دفعہ 324 کے تحت مقدمہ درج شروع کر کے ملزم کو گرفتار کر کے سول جج ملک امان اللہ کی عدالت میں پیش کر دیا،عدالت نے ملزم کو 14 روزہ جوڈیشل ریمانڈ پر بھیج دیا ہے۔

0Shares

Comments are closed.