ملتان سلطانز کے میچ ونر’ڈیوڈ ولی’ نے اپنی ٹیم کو2میچ جتوادیئے

فوٹو: فائل

کراچی( سپورٹس ڈیسک)ملتان سلطانز کے میچ ونر’ڈیوڈ ولی’ نے اپنی ٹیم کو2میچ جتوادیئے،انگلینڈ کے فاسٹ بولر ڈیوڈ ولی نے اس وقت ٹیم کی مدد کی جب باقی باولرز تقریباً ناکام اور ہمت ہار چکے تھے۔

ڈیوڈ ولی نے پہلے کوئٹہ گلیڈی ایٹرز کے خلاف 3وکٹیں حاصل کر کے میچ کا پانسہ پلٹا تھا جب کہ گزشتہ روز اسلام آباد یونائٹیڈ کے خلاف ایک اور فتخ گر اننگز کھیل کر انھوں نے ثابت کیا کہ وکٹیں لینے کیلئے صرف اسپیڈ ہونا کافی نہیں ہوتا ذہنی پختگی بھی ضروری ہے۔

انگلینڈ سے تعلق رکھنے والے باولرڈیوڈ ولی نے ایک انٹرویو میں بتایا کہ ملتان کے اسکواڈ میں ہر پلیئر ٹیم پلیئر ہے، یہی جیت کا راز ہے، شاہنواز دھانی جیسا کھلاڑی ڈریسنگ روم میں رونق بڑھاتا ہے۔

ڈیوڈ ولی نے کہا کہ پاکستان آنے سے قبل تھوڑی گھبراہٹ تھی مگر یہاں آکر اچھا لگا، جن انتظامات کا کہا گیا تھا ویسے ہی انتظامات ہیں،
پاکستان میں سیکیورٹی بہت شاندار ہے، کرکٹ بھی عمدہ ہے۔

برطانوی کرکٹرکا کہنا تھا کہ پاکستان کرکٹ کھیلنے کیلئے بہترین ملک ہے، امید ہے یہاں حالات ایسے ہی رہے اور زیادہ سے زیادہ کرکٹ ہو،
ان کا کہنا تھا کہ بطور پلیئر ہم بورڈز کے فیصلوں کے پابند ہوتے ہیں۔

معین علی اور عادل رشید نے پاکستان کے حوالے سے مثبت باتیں کیں

ڈیوڈ ولی نے انکشاف کیا کہ برطانوی کرکٹرز معین علی اور عادل رشید نے پاکستان کے حوالے سے ہمیشہ مثبت باتیں کہیں، انہیں پاکستان کا اندازہ تھا، مگر بدقسمتی ہے کہ کووڈ کی وجہ سے ہوٹل میں بند ہیں باہر نہیں جاسکتے۔

انھوں نے کہا کہ پاکستان سپر لیگ کا معیار بہت شاندار ہے، پی ایس ایل میں فاسٹ بولرز کا خزانہ موجود ہے، اکثر تو ابھی بینچ پر ہے یہی پی ایس ایل کی خوبصورتی ہے۔

ڈیوڈ ولی نے بتایا کہ جوفرا آرچر کی وجہ سے ورلڈ کپ سے باہر ہونے پر دکھ تو ہوا تھا، شاید میں اس وقت اچھی کرکٹ نہیں کھیل رہا تھا ،اس لئے 2019 کا ورلڈ کپ مس کیا۔

انہوں نے کہا کہ سابق کرکٹر کا بیٹا ہونے کی وجہ سے ایج گروپ کرکٹ میں طعنے ملتے تھے، والد کو یہ پسند نہیں تھا کہ میری اپنی شناخت ہو نہ کہ کوئی مجھے پیٹر ولی کا بیٹاکہے، تاہم آئندہ ٹی ٹوئنٹی ورلڈ کپ کیلئے اسکواڈ میں شمولیت کا دباو نہیں ہے۔

0Shares

Comments are closed.