پاکستان اسٹاک ایکسچینج میں زیادہ منافع کمانے کا 10 سالہ ریکارڈ ٹوٹ گیا

کراچی(ویب ڈیسک) پاکستان اسٹاک مارکیٹ میں کاروباری ہفتہ کے آخری روز تیزی دیکھی گئی جبکہ پاکستان اسٹاک ایکسچینج میں زیادہ منافع کمانے کا 10 سالہ ریکارڈ ٹوٹ گیا.

پاکستان اسٹاک ایکسچینج کا سال 2021 میں مجموعی منافع 258 ارب روپے ریکارڈ کیا گیا، 2022 کا پہلا کاروباری ہفتہ بھی منافع بخش ثابت ہوا۔

  وفاقی وزیر خزانہ شوکت ترین کی جانب سے کی گئی ٹویٹ میں دعویٰ کیا گیا ہے کہ پاکستان اسٹاک ایکسچینج نے زیادہ منافع کمانے کے معاملے میں 10سالہ ریکارڈ توڑ ڈالا ہے۔

شوکت ترین نے لکھا ہے کہ پاکستان سٹاک ایکسچینج نے سال 2021 میں 258ارب روپے کا مجموعی منافع حاصل کیا ہے، یہ گزشتہ 10 سالوں میں بلند ترین شرح ہے۔

دوسری طرف وزیر اطلاعات فواد چوہدری نے بھی ایسا ہی دعویٰ کیا ہے ان کا کہنا ہے کہ پاکستان اسٹاک ایکسچینج میں یہ زبردست کامیابی کرونا وبا کے باوجود حاصل ہوئی ہے ۔

جمعہ کو وفاقی اور صوبائی حکومتوں کی جانب سے لاک ڈاون کی اطلاعات کی تردید کے بعد پاکستان اسٹاک مارکیٹ میں کاروباری ہفتہ کے آخری روز تیزی دیکھی گئی اور 100انڈیکس 263پوائنٹس اضافہ کے بعد 45345پوائنٹس کی سطح پر بند ہوا۔

مارکیٹ میں تیزی کے سبب سرمائے کے حجم میں لگ بھگ44ارب روپے کا اضافہ ہوا، تاہم حصص کی فروخت کے دباو کے باعث کاروباری حجم میں10کروڑ سے زائد حصص کی کمی ریکارڈ کی گئی۔

اس حوالے سے اسٹاک ماہرین کا کہنا ہے کہ وفاقی اور صوبائی حکومتوں کی جانب سے لاک ڈاون کی افواہوں کی تردید کے باعث مارکیٹ میں سرمایہ کاروں نے سکھ کا سانس لیا اور کاروباری لین دین میں دلچسپی لی.

ماہرین کے مطابق ملکی وغیر ملکی سرمایہ کار اومیکرون وائرس کے بڑھتے ہوئے پھیلاو کے باعث ممکنہ لاک ڈاون کی خبروں سے پریشان ہیں اور جمعہ کو حصص کی فروخت کے دباو کا سبب بھی یہی تھا۔

0Shares

Comments are closed.