نیوزی لینڈ، انگلینڈ میں بھی حملے ہوئے پاکستان پر شور مچایا جاتاہے، ڈیرن سیمی

اسلام آباد(سپورٹس ڈیسک)ویسٹ انڈیز کرکٹ ٹیم کے سابق کپتان ڈیرن سیمی نے کہاہے نیوزی لینڈ، انگلینڈ اور اسٹریلیا میں بھی حملے ہوئے لیکن پاکستان کا بہت شور مچایا جاتاہے۔

پشاور زلمی کے منٹور ڈیرن سیمی نے نجی ٹی وی چینل جیو کے پروگرام میں گفتگو کرتے ہوئے کہا کہ پاکستان میں حالات بدل چکے ہیں، یو اے ای میں میچز لے جانا پاکستان کی محنت خراب کرنا ہے، اگر فیلڈ ماہرین کہہ رہے ہیں پاکستان محفوظ ہے تو اعتماد کرنا چاہیے۔

انھوں نے کہا کہ نیوزی لینڈ کے فیصلے پر مایوسی ہوئی ہے، ہم نے نیوزی لینڈ اور انگلینڈ جیسے ممالک میں بھی حملے ہوتے دیکھے ہیں لیکن اس کے باوجود وہاں کرکٹ کھیلی جاتی ہے۔

ڈیرن سیمی نے کہا کہ پچھلے 6 سال سے پاکستان آرہا ہوں، ہمیشہ اچھا تجربہ رہا، جب 2017 میں آیا تھا ایسا لگا جیسے کسی دوسری دنیا میں کھیل رہے ہیں۔

سابق ویسٹ انڈین کپتان ڈیرن سیمی نے کہا کہ پہلے لوگ پوچھتے تھے کہ کیا پاکستان جانا محفوظ ہے؟ مگر اب لوگ پوچھتے ہیں کہ پاکستان میں کھانا کہاں جاکر کھائیں؟ میں نے تو پاکستان بھر میں گھومتا پھرتا رہا سکیورٹی کاایشو کہیں نظر نہیں آیا۔

ڈیرن سیمی کا کہنا تھاکہ آسٹریلیا میں بھی واقعات ہوتے دیکھے ہیں، دنیا میں ہر جگہ واقعات ہوتے ہیں لیکن وہاں کوئی شور نہیں مچاتا۔پاکستان کے معاملے میں بہت شور ہوتاہے۔

ڈیرن سیمی نے کہا کہ پچھلے 2 سے 3 سالوں میں پاکستان پر لوگوں کا اعتماد بحال ہوا ہے ایسے میں کوئی یہ تجویز کرے کہ عرب امارات میں کھیلیں تو میں سمجھتا ہوں یہ مناسب نہیں ہے یہ پاکستان کی محنت ضائع کرنے والی بات ہے۔

0Shares

Comments are closed.