امریکہ نے پاکستان سے لوٹے گئے نوادرات پاکستان کو واپس کردیئے

فوٹو: پاکستانی قونصلیٹ امریکہ

واشنگٹن( ویب ڈیسک)پاکستان سے لوٹ کر امریکہ لے جائے گئے 33 لاکھ ڈالر مالیت کے 104 نوادرات کے نمونے امریکہ نے پاکستان کو واپس کر دیئے ہیں۔

اس حوالے سے عرب نیوز کے مطابق مین ہٹن کے ڈسٹرکٹ اٹارنی سائیوینس جونیئر نے ایک بیان میں کہاکہ پاکستان کے لوگوں کو واپس کیے گئے نمونوں کا یہ شاندار ذخیرہ اس قوم کے بھرپور ثقافتی ورثے اور انسانیت کی کبھی نہ ختم ہونے والی جستجو کی علامت ہے۔

رپورٹ کے مطابق پاکستان کو واپس کئے گئے 104نمونے ان ہزاروں نوادرات میں شامل ہیں جوکہ امریکہ نے ایشیائی ممالک سے لوٹے گئے نوادرات واپس دیئے ہیں۔

پاکستان کی قونصل جنرل عائشہ علی نے بھی امریکہ سے ایک بیان میں کہا کہ میں مین ہٹن ڈسٹرکٹ اٹارنی آفس اور محکمہ ہوم لینڈ سیکیورٹی کا شکریہ ادا کرنا چاہتی ہوں کہ انہوں نے پاکستان کے ان چوری شدہ ثقافتی خزانوں کی بازیابی میں کوششیں کیں۔

ان کا کہنا تھا کہ امید ہے کہ جلد ہی یہ نمونے پاکستانی عجائب گھروں میں آویزاں کیے جائیں گے،آرگنائزڈ کرائم اینڈ کرپشن رپورٹنگ پراجیکٹ کی رپورٹ کے مطابق سبھاش کپور جن پر 100 ملین ڈالر سے زائد مالیت کی نوادرات لوٹنے کا کاروبار چلانے کا الزام ہے۔

بتایا گیاہے کہ سبھاش کپور 2011 میں اس وقت اخبارات کی سرخیوں میں آئے جب انہیں فرینکفرٹ (جرمنی) میں انٹرپول نے اشیا کی سمگلنگ میں ملوث ہونے پر گرفتار کیا تھا۔

سبھاش کپور کا نیٹ ورک افغانستان، کمبوڈیا، انڈیا، انڈونیشیا، میانمار، نیپال، پاکستان، سری لنکا اور تھائی لینڈ تک پھیلا ہوا تھا، اب اس بات کا امکان ہے کہ بھارت میں بھی ان پر مقدمہ چلایا جائے گا۔

مین ہٹن ڈسٹرکٹ اٹارنی آفس نے 2019 میں کپور اور ان کے سات ساتھیوں کے خلاف فوجداری الزامات دائر کیے تھے۔ ان پر 145 ملین ڈالر کی سمگلنگ کا گروہ چلانے الزام لگایا گیا۔

سبھاش کپورنے 30 برس کی مدت میں مختلف ممالک سے لوٹے گئے ہزاروں نوادرات کے سودے کیے،اب تک کپور کی کلیکشن میں موجود تقریباً 497 میں سے اڑھائی ہزار نمونے 11 ممالک کو واپس بھیج دیے گئے ہیں اور یہ سلسلہ جاری ہے۔

0Shares

Comments are closed.