اے اتھرا عشق نئیں سوون دیندا،انگریزی ترجمہ کہاں ملے گا، جمائمہ

اسلام آباد( زمینی حقائق ڈاٹ کام) وزیراعظم عمران خان کی سابق اہلیہ جمائمہ گولڈ سمتھ نے پاکستان میں اپنے چاہنے والوں سے بہت دلچسب سوال کیا ہے اور کہا ہے کہ مجھے نصرت فتح علی خان کے گائے ان اشعار کے بارے میں بتائیں ان کاانگریزی ترجمہ کہاں سے ملے گا۔


جمائمہ نے سوشل میڈیا پر پیغام میں بابا بھلے شاہ کی شاعری ،اے اتھرا عشق نئیں سوون دیندا ، کاانگریزی ترجمہ جاننے کیلئے پوچھا ہے جسے لیجنڈ نصرت فتح علی خان نے گایا تھا۔

ان کا کہنا ہے کہ کیا کوئی مجھے بتا سکتا ہے کہ میں عظیم نصرت فتح علی خان کے گیت اترا عشق نی ساون ڈینڈا کے دھن کا انگریزی ترجمہ کیسے تلاش کروں؟

جمائمہ کے ٹویٹ کے جواب میں پاکستانیوں کی بڑی تعداد نے انھیں مختلف ٹپس اور مشورے دیئے ہیں کسی نے انھیں وہ سائٹ بھی بتائی ہیں جن سے انھیں ترجمہ مل سکتاہے جب کہ بہت سوں نے وہی کلام بھی دوبارہ شیئر کیاہے۔

ایک صارف چاند بابو نے جمائمہ کو مشورہ دیاہے کہ آپ عمران خان سے رابطہ کریں وہ نصرت فتح علی خان کے چاہنے والے ہیں اوروہ آپ کو اس کا بہترین ترجمہ بتا سکیں گے۔

عامر سعید نے جواب میں کہا کہ پاکستان میں نصرت فتح علی خان کی گائیکی کی تمام کیسٹس دستیاب ہیں بہن اگر آپ حکم کریں تو آپ کو بھیج سکتاہوں۔

فہد فہدی نامی ایک شخص نے لکھا کہ تم ایک عظیم خاتون ہو۔ ہم اپنے وزیر اعظم عمران خان اور آپ سے بھی پیار کرتے ہیں اور ہم سب جانتے ہیں کہ آپ بھی عمران خان سے بہت پیار کرتی ہیں اور انہیں بھی یاد کرتی ہیں۔ اللہ آپ کا بھلا کرے. اس سے کوئی فرق نہیں پڑتا کہ آپ برطانیہ میں ہیں لیکن آپ ہمارے دلوں میں رہتی ہیں۔

بابا بھلے شاہ کے جن اشعار کا ذکر ہوا ہے وہ درج ذیل ہیں۔

اے اتھرا عشق نئی سون دیندا
ساری رات جگائی رکھدا اے
جینوں لگ جاندا اُنوں محشر تک
سُولی تے چڑھائی رکھدا اے
کینویں تڑپ تڑپ کے رات کڈی
پُچھو کجھ نہ غم دے ماریاں نے
بنا چن تو ہوکے لے لے کے
جینویں رات گُزاری تاریاں نے
ساڈے لیکھاں وچ لکھیا جاگنا اے
سُکھی سو گئے سانوں نیند کتھے
لوکو نیند ہُندی سُکھیاں لئی
سونا کی دُکھیاں بے چاریاں نے
ساری دُنیا سکھ دے نال سُتی
اسی غم دے مارے جاگدے رئے
مینوں تڑپدا ویکھ کے سو نا سکے
ساری رات اے تارے جاگدے رئے
یارا ڈک لے خونی اکھیاں نوں
سانوں ہس ہس مار مکایا اے
دل جان جگر زخمی کیتے
نیناں دا تیر چلایا اے
تیرے عشق دے ساڑے سڑ گئے آں
تیری نظر دے مارے مر گئے آں
عشق خونی جدوں اپنی کمان تاندا،
فیر نئی اپنے پرائے نوں جاندا
پیراں تے پیغمبران دا کردا لحاظ نئی
اٹّی مُل پاوے یوسف جئے سلطان دا
گُجے تیر چلا کے نیناں دے
سانوں لذت بخشے زخماں دی
ربا تیر انداز دی خیر ہووے
ساڈے زخم سجائی رکھدا اے
اُس بے پرواہ دی اس عادت
ساڈا حال تباہ کر چھڈیا اے
چن وعدہ کر کے نئی آوندا
سانوں تارے گنائی رکھدا اے
اُوندے قاتل نین نشیلے نے
اوندے ابرو شوخ سجیلے نے
سانوں لُٹیا اُس شرمیلے نے
جیڑا نظر جھکائی رکھدا اے
کتھے کید شہر دا شہزادہ
کتھے زینت بلخ بخارے دی
کتھے والی تخت ہزارے دا
کتھے مجیاں چرائی رکھدا اے
کیھے عرشاں تے کیھتے غاراں وچ
کھتے مصر دیاں بازاراں وچ
کربل دے محشر زاراں وچ
سجن ازمائی رکھدا اے
اے اتھرا عشق نئی سون دیندا
ساری رات جگائی رکھدا اے
جینوں لگ جاندا اُنوں محشر تک
سُولی تے چڑھائی رکھدا اے

0Shares

Comments are closed.