پاکستان کو ٹیم واپس بلانے کی تفصیلات نہیں بتائیں گے، ڈیوڈ وائٹ

آکلینڈ (ویب ڈیسک) سکیورٹی کا بہانہ بنا کر پاکستان سے ٹیم واپس بلانے کے حوالے سے نیوزی لینڈ کرکٹ کے چیف ایگزیکٹیو ڈیوڈ وائٹ کا کہنا ہے کہ کرکٹ ٹیم کولاحق خطرے کی تفصیلات نہ پاکستان کو بتائی گئیں اور نہ ہی بتائی جائیں گی۔

نیوزی لینڈ کرکٹ کی طرف سے جاری اعلامیہ میں کیوی بورڈ کے چیف ایگزیکٹیو ڈیوڈ وائٹ نے کہا ہے کہ نیوزی لینڈ کرکٹ ٹیم پاکستان کے خلاف سیریز کھیلنے کے لیے پرعزم تھی۔

پاکستان کی سکیورٹی صورتحال کا تفصیلی جائزہ اور خطرات سے نمٹنے کے لیے کیے گئے انتظامات کا جائزہ لیا گیا تھا لیکن جمعہ کے روز ہر چیز بدل گئی، اس حوالے سے دی گئی ہدایات اور ممکنہ خطرے کے پیش نظر حالات بھی بدل گئے۔

ڈیوڈ وائٹ جن کے پاس بتانے کو جواز بھی نہیں ہے کا کہنا ہے کہ نیوزی لینڈ کرکٹ ٹیم کے دورے کی منسوخی کی مختصر وجوہات پاکستان کرکٹ بورڈ کو بتائی گئی ہیں تاہم تفصیلی انداز میں نہ تو انہیں بتایا گیا ہے اور نہ ہی بتایا جائے گا۔

انھوں نے کہا کہ ہمیں معلوم ہے کہ یہ پی سی بی کے لیے انتہائی مشکل وقت ہے لیکن ہمارے پاس دورہ منسوخ کرنے کے علاوہ کوئی راستہ نہیں تھا۔

ہمیں جو ہدایات ملیں وہ ٹیم کو درپیش ممکنہ خطرے سے متعلق ایک ذمہ دار اور انتہائی محتاط ذریعے سے ملنے والی رپورٹس کا نتیجہ تھیں۔ ڈیوڈ وائٹ نے کہا کہ نیوزی لینڈ حکومت کی جانب سے ملنے والی ہدایات کی روشنی میں ہم نے انتہائی ذمہ دارانہ قدم اٹھایا۔

ان کا کہنا ہے کہ ہم نے فیصلہ کرنے سے پہلے نیوزی لینڈ کے حکومتی عہدیداروں کے ساتھ کافی بات چیت کی اور پی سی بی کو اپنے موقف سے آگاہ کرنے کے بعد ہی ہم سمجھتے ہیں کہ دونوں ملکوں کے وزرائے اعظم کے درمیان ٹیلی فون پر بات چیت ہوئی۔

واضح رہے کہ نیوزی لینڈ نے پاکستان کا دورہ اس وقت منسوخ کرنے کااعلان کیا جب دو گھنٹے بعد دونوں ٹیموں کے درمیان راولپنڈی میں شیڈول ایک روزہ میچ کی سیریز کا آغاز ہونا تھا۔

ادھر پاکستان کے سابق کرکٹرز کا کہناہے کہ نیوزی لینڈ کے پاس بتانے کی وجہ ہے ہی نہیں اس لئے وہ نہ بتانے کی بات کررہے ہیں یہ واضح ہو چکاہے کہ نیوز ی لینڈ نادیدہ قوتو ں کے ہاتھوں استعمال ہوا ہے۔

0Shares

Comments are closed.