وزیر اعظم کی امریکی صدر جوبائیڈن، انتونیو گوتریس اور بل گیٹس سے ملاقاتیں ، باہمی دلچسپی کے امور پر تبادلہ خیال

فوٹو:سوشل میڈیا

نیویارک: وزیر اعظم شہباز شریف نے امریکی صدر جوبائیڈن کے ساتھ نیو یارک میں ملاقات کی جس میں باہمی دلچسپی کے امور پر تبادلہ خیال کیا گیا امریکی صدر نے سیلاب زدگان کی امداد اور بحالی کے لئے بھر پور تعاون کے عزم کا اظہار کیا۔

وزیراعظم شہباز شریف کی اقوام متحدہ کی جنرل اسمبلی کے 77ویں اجلاس کے موقع پر یہ ملاقات امریکی صدر کی جانب سے دئیے گئے عشائیہ کے موقع پر ہوئی۔وزیر اعظم شہباز شریف نے امریکی صدر اور ان کی اہلیہ کے ساتھ تصویر بھی بنائی۔

وفاقی وزیر اطلاعات مریم اورنگزیب نے اپنے ٹویٹ میں کہا ہے کہ وزیراعظم شہباز شریف کی امریکہ کے صدر جو بائیڈن سے ملاقات ہوئی. یہ ملاقات اقوام متحدہ جنرل اسمبلی کے 77 ویں اجلاس میں شرکت کرنے والے عالمی رہنماؤں کے اعزاز میں امریکی صدر جوبائیڈن کی جانب سے دیئے گئے استقبالیہ کے موقع پر ہوئی۔

دونوں قائدین نے اقوام متحدہ کی جنرل اسمبلی کے 77 ویں اجلاس کے موقع پر ملاقات کی. امریکی صدر جو بائیڈن نے پاکستان میں تباہ کن سیلاب میں سینکڑوں اموات پر افسوس کا اظہار کیا، متاثرہ خاندانوں سے ہمدردی کی۔

وزیراعظم شہباز شریف نے امریکی صدر کے افسوس اور ہمدردی کے اظہار پر شکریہ ادا کیا. وزیراعظم نے سیلاب متاثرین کی مدد کے عالمی برادری کے نام پیغام اور پاکستان کی حمایت پر امریکی صدر کا خاص طور پر شکریہ ادا کیا۔

وزیراعظم نے امریکی ادارہ برائے بین الاقوامی ترقی (یوایس ایڈ) کی سربراہ کے دورہ پاکستان اور امداد بھجوانے پر امریکی حکومت اور عوام کا شکریہ ادا کیا. امریکی صدر جو بائیڈن نے مشکل انسانی صورتحال میں پاکستان کی مدد جاری رکھنے کے عزم کا اظہار کیا۔

وفاقی وزیر اطلاعات نے کہا کہ وزیراعظم شہباز شریف آج رات اقوام متحدہ کی جنرل اسمبلی سے خطاب کریں گے۔

وزیراعظم شہباز شریف نے سیکرٹری جنرل اقوام متحدہ انتونیو گوتریس اور مائیکرو سافٹ کے بانی بل گیٹس سے ملاقاتیں کیں، اس موقع پر وزیراعظم نے پاکستان میں سیلاب کی تباہ کاریوں سے ہونیوالے نقصانات سے آگاہ کیا۔

وزیراعظم شہباز شریف نے نیویارک میں ایک اور مصروف دن گزارا، مائیکرو سافٹ کے بانی بل گیٹس اور سیکرٹری جنرل اقوام متحدہ سے الگ الگ ملاقات کی۔

وزیراعظم محمد شہباز شریف اور اقوام متحدہ کے سیکرٹری جنرل انتونیو گوتریس کے درمیان ملاقات اقوام متحدہ کے ہیڈکوارٹرز میں جنرل اسمبلی کے 77 ویں اجلاس کے موقع پر ہوئی، ملاقات میں وزیر اعظم نے سیکرٹری جنرل کے بروقت دورہ پاکستان کو سراہا۔

دوران ملاقات شہباز شریف نے متاثرہ لوگوں کے لئے بین الاقوامی حمایت اور امداد کو متحرک کرنے کے لئے سیکرٹری جنرل کی کوششوں پر اظہار تشکر کیا اور ترقی پذیر ممالک پر موسمیاتی تبدیلی کے اثرات کو کم کرنے کے لیے ٹھوس بین الاقوامی اقدامات کی ضرورت پر بھی زور دیا۔

سرکاری اعلامیے کے مطابق وزیر اعظم نے موسمیاتی تبدیلیوں کے پاکستان پر اثرات اور سیلاب کے تباہ کاریوں کے بارے میں آگاہ کیا۔

ادھر وزیراعظم نے مائیکرو سافٹ کے بانی بل گیٹس سے ملاقات بھی کی، بل گیٹس نے پاکستان میں سیلاب متاثرہ علاقوں میں امدادی سرگرمیاں جاری رکھنے کے عزم کا اعادہ کیا۔

وزیراعظم نے سیلاب سے متاثرہ علاقوں میں زچگی اور نوزائیدہ بچوں کی دیکھ بھال کو ترجیح دینے کی ضرورت کو تسلیم کیا اور پاکستان کے ساتھ امدادی سرگرمیوں میں تعاون پر بل گیٹس فاؤنڈیشن کا شکریہ ادا کیا۔

پولیوکے خاتمے کے حوالے سے تبادلہ خیال کرتے ہوئے انہوں نے کہا کہ سیلاب اور خاص طور پر پولیو کیسز کی تعداد میں حالیہ اضافے کے بعد پولیو کے خاتمے کیلئے کوششوں میں ایک مشکل صورتحال کا سامناکرنا پڑ رہا ہے۔وزیراعظم نے حکومت کے اس عزم کا اعادہ کیاکہ پولیو مہم کو کسی تاخیر کے بغیر جاری رکھا جائے گا۔

بعدازاں وزیراعظم شہباز شریف نے اقوام متحدہ میں پاکستان کے سیلاب کی تباہ کاریوں سے متعلق تصویری نمائش کا دورہ کیا۔

اقوام متحدہ کی انڈر سیکرٹری کے ہمراہ سیلاب سے متعلق تصویری نمائش دیکھی، سیلاب متاثرین کے مسائل اجاگر کرنے کی کوشش کو سراہا۔

اس موقع پر وزیراعظم نے کہا کہ سیلاب سب کچھ بہا کر لے گیا، 40 لاکھ ایکڑ پر کھڑی فصلیں تباہ ہوگئیں، 9 لاکھ سے زائد جانور پانی میں بہہ گئے، شہبازشریف نے امریکا، ایران، ترکی اور دیگر ممالک کی بروقت امداد کو سراہتے ہوئے کہا کہ انتونیو گوتریس دکھی انسانیت کیلئے آواز اٹھارہے ہیں۔

اپنے ٹویٹ میں وزیراعظم شہباز شریف نے لکھا کہ تصویری نمائش متاثرین کی تکالیف بیان کرتی ہے، سوا تین کروڑ عوام اس بحران سے گزر رہے ہیں، متاثرین کیمصائب کو ہمددردی کے ساتھ سننے کی ضرورت ہے۔

اقوام متحدہ کی انڈرسیکرٹری ملیسا فلیمنگ نے کہا کہ موسمیاتی تبدیلی کے باعث پاکستان کو بڑے چیلنج کا سامنا ہے، دنیا کو مشکل وقت میں پاکستان کی مدد کرنی چاہیے۔

0Shares

Comments are closed.