زیرالتواء مقدمات، قصور وار عدالتیں نہیں کوئی اور ہے، چیف جسٹس

12
0 0
Read Time:1 Minute, 23 Second

اسلام آباد(ویب ڈیسک) چیف جسٹس سپریم کورٹ جسٹس آصف سعید کھوسہ نے کہا ہے کہ زیر التواء مقدمات کا طعنہ عدالتوں کو دیا جاتا ہے جب کہ زیر التواء مقدمات کی قصور وار عدالتیں نہیں کوئی اور ہے۔

ایک دیوانی مقدمے کی سماعت کے دوران چیف جسٹس پاکستان جسٹس آصف سعید کھوسہ نے ریمارکس دیے کہ عدالتوں میں ججز کی 25 فیصد خالی آسامیاں پْر ہوں تو زیرالتواء مقدمات ایک 2 سال میں ختم ہوجائیں گے، 21 سے 22 کروڑ کی آبادی کے لیے صرف 3 ہزار ججز ہیں۔

چیف جسٹس کا کہنا تھا عدالتوں میں اب زیر التواء مقدمات کی تعداد 19 لاکھ ہوگئی ہے، گزشتہ ایک سال میں 31 لاکھ مقدمات نمٹائے گئے۔

ایک سال میں صرف سپریم کورٹ نے 26 ہزار مقدمات نمٹائے جب کہ امریکا کی سپریم کورٹ نے گزشتہ ایک سال میں صرف 80 سے 90 مقدمات نمٹائے۔

جسٹس آصف سعید کھوسہ کا کہنا تھا کہ ججز کی کمی کے باوجود ہمارے ججز زیر التواء مقدمات نمٹانے کی بھرپور کوشش کر رہے ہیں، اس کے باوجود بھی لوگ عدلیہ پر تنقید کرتے ہیں۔

چیف جسٹس نے مزید کہا کہ زیر التواء مقدمات کا طعنہ عدالتوں کو دیا جاتا ہے، زیر التواء مقدمات کی قصور وار عدالتیں نہیں کوئی اور ہے۔

Happy
Happy
0 %
Sad
Sad
0 %
Excited
Excited
0 %
Sleppy
Sleppy
0 %
Angry
Angry
0 %
Surprise
Surprise
0 %
Shares

Average Rating

5 Star
0%
4 Star
0%
3 Star
0%
2 Star
0%
1 Star
0%

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

Translate »