سعودی عرب میں ترک مصنوعات کے بائیکا ٹ کی مہم جاری

0
0 0
Read Time:3 Minute, 56 Second

فوٹو: ٹوئٹر ، سوشل میڈیا

ریاض :سعودی عرب میں ترک مصنوعات کے بائیکاٹ کرنے مہم جاری ہے جس میں حکومتی ایما پر اب اہم شخصیات اور کمپنیوں کی طرف سے بھی مہم کی حمایت سامنے آ رہی ہے۔

اس حوالے سے سیاسی تجزیہ کار اور بین الاقوامی تعلقات کے ماہر ڈاکٹرحمدان الشھری نے کہا ترکی مصنوعات کی اس مقبول بائیکاٹ کے پیچھے ترکی کی سیاسی پیچیدگیوں اور مشرقِ وسطیٰ کے ممالک میں مداخلت ہی اصل وجہ ہے۔

اردو نیوز کی رپورٹ کے مطابق ڈاکٹرحمدان الشھری نے کہا کہ ترکی کے صدر رجب طیب اردوغان نے ملکی مسائل کو کم کرنے کی اپنی سابقہ پالیسی میں تبدیلی کی اور اسے بیرون ملک برآمد کیا۔

ترکی خطے میں اسی طرح دھمکی دے رہا ہے جس طرح ایران دہشت گرد ملیشیاؤں کا استعمال کرتے ہوئے انہیں خطے کے ممالک میں پھیلا رہا ہے اور اخوان کی حمایت کے ذریعے جسے دنیا کے متعدد ممالک میں ایک دہشت گرد تنظیم کے طور پر درجہ بند کیا گیا ہے۔

انھوں نے کہا یہ عرب ممالک اور خلیجی ریاستوں کے لیے براہ راست علاقائی سلامتی کا خطرہ ہے۔ خاص طور پر ترکی نے قطری بحران سے فائدہ اٹھانا اور فلسطینی کاز کی مسلسل نیلامی سے۔

فوٹو عرب نیوز

ڈاکٹر الشھری نے کہا کہ ترک مصنوعات کا مقبول بائیکاٹ سعودی عوام اور دیگر لوگوں کا ایک پیغام تھا جو خطے کے ممالک کے ساتھ ترکی کی مداخلت اور ترک دشمنی کو مسترد کرنے کی مہم سے یکجہتی کر رہے تھے جیسے اس مسئلے میں ان کی مداخلت۔ دو مقدس مسجدوں کے معاملے اور عراق، شام اور لیبیا میں مداخلت کا۔

انہوں نے کہا کہ کویڈ 19 کی وجہ سے بائیکاٹ عالمی معاشی بحران کو متاثر کرنے میں اہم کردار ادا کرے گا جس نے وبائی بیماری سے نمٹنے میں اور اردوغان کی بد انتظامی اور ترک لیرا کی بڑی کمزوری دونوں کو ثابت کیا،مقبول بائیکاٹ کو مقامی کمپنیوں کی بھی حمایت حاصل ہے۔

سعودی دارالحکومت ریاض کے سب سے قدیم سٹورز میں سے ایک السدحان گروپ نے اس مہم کے اپنی حمایت کا اظہار کیا ہے۔ اس کے سی ای او عید الغنزی نے عرب نیوز کو بتایا کہ جب ترکی نے مملکت اور اس کی قیادت کے ساتھ واضح دشمنی کا مظاہرہ کیا تھا تو معاشرے کے لیے ترک مصنوعات خریدنا اور فروخت کرنا مناسب نہیں تھا۔

انھوں نے کہا السدحان گروپ نے اس بات پر زور دیا کہ اس نے تمام ترک مصنوعات کا بائیکاٹ کرنے والی کمیونٹی کی کوششوں کی حمایت کی،السدحان ٹریڈنگ کمپنی اور ایس پی اے آر سٹورز، جو اس گروپ کی ذیلی تنظیمیں ہیں نے براہ راست ترکی سے کوئی سامان درآمد نہیں کیا۔

بیان میں کہا گیا ہے کہ اس گروپ کی اعلیٰ انتظامیہ نے السدحان اور سپار سپر مارکیٹوں کو ترکی کی مصنوعات کی فروخت بند کرنے کی ہدایت کی تھی،بیان میں یہ بھی کہا گیا ہے کہ السدحان گروپ ان قومی کوششوں کی حمایت جاری رکھے گا جو مذہب، بادشاہ اور ملک کی خدمت کریں۔

الغنزی نے کہا کہ ترکی کی تمام مصنوعات کا بائیکاٹ کرنا ضروری تھا کیونکہ ترکی نے مملکت سے اپنی دشمنی ظاہر کر دی ہے۔ انہوں نے کہا کہ یہ ہر شہری کا فرض بنتا ہے کہ وہ کسی بھی ایسے ملک کی مصنوعات کا بائیکاٹ کرے جو مملکت اور سعودی قیادت کا احترام نہیں کرتاہے۔

عبد اللہ العثیم مارکیٹس نے جمعے کے روز اعلان کیا تھا کہ وہ ترکی سے درآمدات روک دے گی۔ ہم نے اپنے تمام صارفین کو، تمام متعلقہ محکموں کو ہدایت کی ہے کہ وہ ترکی سے مصنوعات کی درآمد اور مقامی سپلائرز سے ترکی کی مصنوعات کی خریداری بند کردیں ۔

رپورٹ کے مطابق سعودی ادیب اور تجزیہ کار مبارک العاتی نے کہا ہے کہ سعودی عوام کی بڑھتی ہوئی تعداد نے ترک مصنوعات کے بائیکاٹ کا مطالبہ کیا ہے اور ان آوازوں نے ایک مضبوط اور ٹھوس معاشی اقدام تشکیل دیا تھا جو ترک معیشت پر ظاہر ہوتا ہے اور جو گر رہا تھا۔

انہوں نے کہا بائیکاٹ کا مطالبہ ترکی میں جسٹس اینڈ ڈویلپمنٹ پارٹی اور صدر اردوغان کے مخالفانہ اقدامات کے خلاف سعودیوں سے قومی اتحاد کی عکاسی کرتا ہے۔ سعودی عوام ترک حکومت کو پیغام بھیج رہے ہیں کہ مملکت اور قیادت کی سلامتی اور امیج ایک سرخ لکیر ہے۔

سعودی شہری عدنان الاسلمی نے کہا ہے کہ انہوں نے ترک مصنوعات کے مقبول بائیکاٹ کی مکمل حمایت کی ہے اور متبادل مقامی مصنوعات بھی ہیں جیسے ترکی کی مصنوعات۔انہوں نے کہا کہ سعودی سرمایہ کاروں کو بائیکاٹ کا فائدہ اٹھانا چاہئے اور پڑوسی ممالک میں جانا چاہئے۔

انہوں نے کہا میں اللہ رب العزت سے دعا کرتا ہوں کہ وہ ہمارے ملک کی حفاظت کرے اور ہمیں دو مقدس مساجد کے ولی عہد اور ولی عہد شہزادہ کی سربراہی میں سلامتی اور حفاظت کی نعمت عطا کرتا رہے۔

Happy
Happy
0 %
Sad
Sad
0 %
Excited
Excited
0 %
Sleepy
Sleepy
0 %
Angry
Angry
0 %
Surprise
Surprise
0 %
0Shares

Average Rating

5 Star
0%
4 Star
0%
3 Star
0%
2 Star
0%
1 Star
0%

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

Translate »