بالی وڈ ادکارہ نے خواجہ سرا ہونے کا انکشاف کرکے تہلکہ مچا دیا

0
0 0
Read Time:2 Minute, 1 Second

فوٹو: فائل

نیو یارک(ویب ڈیسک) آسکر ایوارڈ کی نامزد اور ‘امبریلا اکیڈمی’ میں کام کرنے والی بالی وڈ اداکارہ ایلن پیج نے یہ انکشاف کر کے تہلکہ مچا دیاہے کہ وہ عورت نہیں بلکہ خواجہ سرا ہے۔

ہالی وڈ فلم جونو کے لیے آسکر ایوارڈ کی نامزدگی کے بعد اداکارہ ایلن پیج نے یہ انکشاف خود انسٹاگرام پر اپنی ایک تحریر میں کیا ہے جس کے بعد فلم بین اور ان کے چاہنے والے مداح ورطہ حیرت میں مبتلا ہیں۔

ایلن نے انسٹاگرام پیج کا نام تبدیل کرنے کے ساتھ ساتھ لیکھا ہے خواجہ سرا ہونے پر ان کے جو احساسات ہیں اُنہیں وہ الفاظ میں بیان نہیں کرسکتیں۔ میرے لیے یہ بیان کرنا قابلِ ذکر احساس ہے کہ میں خواجہ سرا ہوں۔

33 سالہ پیج کو 2007ء میں ریلیز ہونے والی فلم جونو میں نو عمر حاملہ کے کردار پر اکیڈمی ایوارڈ کے لیے نامزد کیا گیا تھا تاہم انھیں شہرت2010 میں پیج کو سائنس فکشن تھرلر فلم انسیپشن میں شاندار اداکاری سے بھی ملی۔

ان دنوں اداکارہ نیٹ فلکس کی سپر ہیرو سیریز امبریلا اکیڈمی میں کام کر رہی ہیں،اپنی انسٹاگرام پوسٹ میں پیج نے لکھا ہے کہ ان کے لیے عورت کے بجائے مرد کا صیغہ استعمال کیاجائے۔

پیج نے خواجہ سرا ہونے پر جہاں خوشی کا اظہار کیا وہیں اُن کا یہ بھی کہنا تھا کہ وہ اس بات سے خوف زدہ ہیں کہ انہیں آئندہ کن حالات کا سامنا کرنا پڑ سکتا ہے اور اس انکشاف کے بعد کس حد تک اُن کا استحقاق مجروح ہو گا۔

اداکارہ کہتی ہیں کہ مجھے ڈر ہے کہ لوگ میرا مذاق اڑائیں گے، مجھے نفرت سے دیکھا جائے گا، لوگ مجھ پر لطیفے بنائیں گے اور شاید مجھے تشدد بھی برداشت کرنا پڑے۔

انہوں نے اس عزم کا بھی اظہار کیا کہ وہ اُن تمام خواجہ سراؤں کی فلاح و بہبود کے لیے کام کریں گے جو ہر روز کسی نہ کسی طریقے سے ہراساں کیے جاتے ہیں، جو خود سے نفرت کرنے، بدسلوکی اور تشدد کے خطرے سے نمٹ رہے ہیں۔

یہ تحریر بطور مرد کی گئی ہے جس میں انہوں نے مزید کہا کہ میں اکثر ایسے خواجہ سراوں کو دیکھتا ہوں جنہیں تشدد کا سامنا ہوتا ہے، میں اُن سے پیار کرتا ہوں اور اس دنیا کو اُن کے لیے بہتر بنانے کی غرض سے ہر ممکن کوشش کروں گا۔

Happy
Happy
0 %
Sad
Sad
0 %
Excited
Excited
0 %
Sleppy
Sleppy
0 %
Angry
Angry
0 %
Surprise
Surprise
0 %
Shares

Average Rating

5 Star
0%
4 Star
0%
3 Star
0%
2 Star
0%
1 Star
0%

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

Translate »